Hijab is not a piece of cloth on your head it is a way of life

 —
Rating
Likes Talking Checkins
5003 125
About ~ If your comments will be unethical Or related to any Page link will be deleted and also she/he will be ban from page.~
Description The first rule of hijab has been derived from the following passages of the Qur'an: "And tell the believing women to lower their gaze and be modest, and to display of their adornment only that which is apparent, and to draw their veils over their bosoms, and not to reveal their adornment save to their own husbands or fathers or husbands' fathers, or their sons or their husbands' sons, or their brothers or their brothers' sons or sisters' sons, or their women, or their slaves, or male attendants who lack vigor, or children who know naught of women's nakedness. And let them not stamp their feet so as to reveal what they hide of their adornment. And turn unto Allah together, O believers, in order that ye may succeed." (24:31)

The second rule of hijab, according to Muhammad Nasiruddin al-Albani's research, is that hijab in itself should not be a source of attraction. It should not become a display of finery referred to in the Qur'an as 'tabarruj': "Stay in your homes and do not display your finery as women used to do in the days of Jahiliyah (period before Islam). Attend to your prayers, give alms to the poor, and obey God and His Messenger, God only wishes to remove uncleanliness from you (members of the family), and to purify you." ( 33:33 )

=============================================
THE IMPORTANCE OF HIJAB (FACE VEIL)

Narrated Aisha: The woman is to bring down her Jilbāb (veil) from over her head and [then place it] upon her face.

(Bukhar i) 6:60:282}, {Sunnan Abu Dawud 32:409}

Narrated Aisha, Ummul Mu'minin: The Prophet (peace_be_upon_him) said:

Allah does not accept the prayer of a woman who has reached puberty unless she wears a veil.
Sunan Abu-Dawud. 064;
narrated and classed as saheeh by al-Tirmidhi, 377

O Prophet! Tell your wives and your daughters and the women of the believers to draw their cloaks (veils) all over their bodies (i.e. screen themselves completely except the eyes or one eye to see the way). That will be better, that they should be known (as free respectable women) so as not to be annoyed. And Allah is Ever Oft-Forgiving, Most Merciful.
( سورة الأحزاب , Al-Ahzab, Chapter #33, Verse #59)

Narrated Aisha: The riders used to pass by us when we were with the Messenger of Allaah in ihrām When they came near, each of us would lower her Jilbāb from her head over her face, and when they passed by we would uncover our faces.(Bukhari)

Narrated Aisha: Safwaan ibn al-Mu’attal al-Sulami al Dhakwaani was lagging behind the army. She said, “He came to where I had stopped and saw the black shape of a person sleeping. He recognized me when he saw me, because he had seen me before Hijāb was enjoined. I woke up when I heard him saying ‘Inna Lillaahi wa inna ilayhi raaji’oon (verily to Allaah we belong and unto Him is our return),’ and I covered my face with my Jilbāb Sahih Muslim, 2:2770

Narrated Um 'Atiya: We were ordered to bring out our menstruating women and veiled women in the religious gatherings and invocation of Muslims on the two 'Eid festivals. These menstruating women were to keep away from their Musalla. A woman asked, "O Allah's Apostle ' What about one who does not have a niqab?" He said, "Let her share the veil of her companion." Sahih al-Bukhari

Narrated Thabit ibn Qays : A woman called Umm Khallad came to the Prophet while she was veiled. She was searching for her son who had been killed in the battle. Some of the Companions of the Prophet said to her: You have come here asking for your son while veiling your face? She said: If I am afflicted with the loss of my son, I shall not suffer the loss of my modesty. The Apostle of Allah said: You will get the reward of two martyrs for your son. She asked: Why is that so, oh Prophet of Allah? He replied: Because the people of the Book have killed him.
"Sahih al-Bukhari"


-----------------------------------------------------------------------------------------

"Invite to the Way of your Lord (i.e. Islam) with wisdom and fair preaching, and argue with them in a way that is better. Truly, your Lord knows best who has gone astray from His Path, and He is the Best Aware of those who are guided." (Quran, an-Nahl: 125)

In the same connection, the Prophet (p.b.u.h.) has stated, "Whoever hides knowledge, Allah will brand him with the branding iron from the hellfire." (Ahmad)

Calling people to Allah,it also means completing our own worship, the reason for which we are created. It is one of the noblest acts that entails a high reward.

"And who is better in speech than he who (says: 'My Lord is Allah (believes in His Oneness),' and then stands straight (acts upon His Order), and) invites (men) to Allah (Islamic Monotheism), and does righteous deeds, and says: 'I am one of the Muslims.'" (Quran, Fussilat: 33)

Never ever give up on people. One day a man set out to kill the Prophet (peace be upon him) He is now buried next to him. The Great Umar Ibn Khattab. There is always hope :) Please SHARE this beautiful message :)

-----------------------------------------------------------------------------------------


حضرت عائشہ (رضي اللہ تعالی عنہا) ام المومنین سے روایت ہے کے نبی (صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وآلہ وَسَلَّم) نے فرمایا.. الله تعالیٰ اس عورت کی نماز قبول نہیں فرماتے جو بلوغت تک پہنچ جاۓ اور پردہ نہ کرے.

[ ابو داؤد، کتاب:2 ، حدیث:641 ]

Narrated hazrat Aisha ؓ that Prophet ﷺ said, Allah does not accept the prayer of a women who reach puberty is and do not do hijab/veil (cover herself from non'mehrams)

[ Abu Daod, Book:2, Hadees:641 ]

شوہر کی اجازت کے بغیر گھر سے نکلنا جائز نہیں.

عورتوں کے گھر سے نکلنے کے لیے ایک ادب یہ بھی سکھایا گیا ہے کہ وہ شوہر کی اجازت کے بغیر گھر سے نہ نکلیں۔حضرت معاذ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللهصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایاکہ

”جو عورت بھی الله اور قیامت کے دن پر ایمان رکھتی ہے ۔ اس کے لیے جائز نہیں ہے کہ شوہر کی اجازت کے بغیر اس کے گھر میں کسی کو آنے دے اور شوہر کی مرضی کے بغیر گھر سے باہر نہ نکلے اور اس بارے میں وہ کسی کی اطاعت نہ کرے ۔“ ( مستدرک حاکم، طبرانی)

فائدہ حقیقت یہ ہے کہ گھر سے نکلنے کے لیے شوہر سے اجازت لینا ایک ایسا اصول ہے جو عورت کو عفیف و پاک دامن رہنے میں بڑی مدد دیتا ہے ۔ جو عورتیں اپنے شوہروں کی اجازت کے بغیر جہاں چاہے آتی جاتی ہیں اور جسے چاہے شوہر کی غیر موجودگی میں گھر بلا لیتی ہیں، ان کا اخلاق و کردار آہستہ آہستہ بگڑتا چلا جاتا ہے اور وہ گناہوں کی دلدل میں دھنستی چلی جاتی ہیں۔
---------------------------------------------------------------------------------


رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا:
بہت سی عورتیں جو دنیا میں باریک کپڑے پہننے والی ہیں وہ آخرت میں ننگی ہوں گی. (الله ان كو رسوا کرے گا.
صحیح بخاری:...
1126 جلد 2
5844, 6218 جلد 7

القرآن الكريم
اور آپ مومن عورتوں سے فرما دیں کہ وہ (بھی) اپنی نگاہیں نیچی رکھا کریں اور اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کیا کریں اور اپنی آرائش و زیبائش کو ظاہر نہ کیا کریں سوائے (اسی حصہ) کے جو اس میں سے خود ظاہر ہوتا ہے اور وہ اپنے سروں پر اوڑھے ہوئے دوپٹے (اور چادریں) اپنے گریبانوں اور سینوں پر (بھی) ڈالے رہا کریں اور وہ اپنے بناؤ سنگھار کو (کسی پر) ظاہر نہ کیا کریں سوائے اپنے شوہروں کے یا اپنے باپ دادا یا اپنے شوہروں کے باپ دادا کے یا اپنے بیٹوں یا اپنے شوہروں کے بیٹوں کے یا اپنے بھائیوں یا اپنے بھتیجوں یا اپنے بھانجوں کے یا اپنی (ہم مذہب، مسلمان) عورتوں یا اپنی مملوکہ باندیوں کے یا مردوں میں سے وہ خدمت گار جو خواہش و شہوت سے خالی ہوں یا وہ بچے جو (کم سِنی کے باعث ابھی) عورتوں کی پردہ والی چیزوں سے آگاہ نہیں ہوئے (یہ بھی مستثنٰی ہیں) اور نہ (چلتے ہوئے) اپنے پاؤں (زمین پر اس طرح) مارا کریں کہ (پیروں کی جھنکار سے) ان کا وہ سنگھار معلوم ہو جائے جسے وہ (حکمِ شریعت سے) پوشیدہ کئے ہوئے ہیں، اور تم سب کے سب اللہ کے حضور توبہ کرو اے مومنو! تاکہ تم (ان احکام پر عمل پیرا ہو کر) فلاح پا جاؤo
سورة النور ﴿٣١﴾

اے نبی! اپنی بیویوں اور اپنی صاحبزادیوں اور مسلمانوں کی عورتوں سے فرما دیں کہ (باہر نکلتے وقت) اپنی چادریں اپنے اوپر اوڑھ لیا کریں، یہ اس بات کے قریب تر ہے کہ وہ پہچان لی جائیں (کہ یہ پاک دامن آزاد عورتیں ہیں) پھر انہیں (آوارہ باندیاں سمجھ کر غلطی سے) ایذاء نہ دی جائے، اور اللہ بڑا بخشنے والا بڑا رحم فرمانے والا ہےo

اے نبی صلی اللہ علیہ و سلم ) مومن عورتوں سے کہہ دیجئے کہ وہ اپنی نظر یں نیچی رکھیں ، اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریں ۔ (النور24:آیت31)

2 اپنی زیب وزینت کا اظہار نہ ہونے دیں۔(النور24:آیت31)

3 اپنی اوڑھنیاں اپنے سینوں پر ڈالے رہیں۔(النور24:آیت31)
...
4 ( غیر محرموں سے) نرم لہجہ میں بات نہ کرو ۔(الاحزاب33:آیت32)

5 نماز کی پابندی کرو، زکوٰۃ کی ادائیگی کرو۔(الاحزاب33:آیت32)

6 اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت کرو۔(الاحزاب33:آیت32)

احادیث میں پردہ کی اہمیت

رسول الله صلی الله عليه وسلم نے فرمایا:
کوئی عورت دوسری عورت کے ستر کو (ننگی حالت میں) نہ دیکھے اور کوئی مرد کسی مرد کے ستر کو نہ دیکھے.
سنن ابن ماجہ 661
جلد 1
نوٹ: مردوں کے لیے ناف سے لے کر گھٹنوں تک ستر ہے.
سورۃ النور کے احکامات کی روشنی میں عورتوں کے لیے چہرے، ہاتھوں اور پاؤں کے علاوہ باقی سب ستر میں آتا ہے.

رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا:
عورت تو ہے ہی سراسر چھپائے جانے والی چیز، جب وہ باہر نکلتی ہے تو شیطان اسے گھور گھور کر دیکھتا ہے.
سنن ترمذی 1173

رسول الله صلی الله عليه وسلم نے فرمایا:
الله تعالی کسی بالغ عورت کی نماز اوڑھنی (دوپٹہ، چادر وغیرہ) کے بغیر قبول نہیں کرتا.
سنن ابن ماجہ 655
جلد 1

رسول اکرم صلی اللہ علیہ و سلم کے عورتوں کے لئے احکامات :

1 ایسے راستوں پر نہ چلیں جہاں مردوں کی ریل پیل ہوبلکہ کنارے کنارہ چلتے ہوئے راستہ طے کریں۔ (ابوداؤد)

2 غیر محرم مردوں سے تنہائی میں نہ ملیں اس لئے کہ اس وقت تیسرا شیطان ہوتا ہے۔(جو برائی کروانے کی بھرپور کوشش کرتا ہے)۔ (ابوداؤد)

3 دیور ، جیٹھ وغیرہ سے بھی تنہائی میں نہ ملیں۔ (بخاری)

4 غیر محرم کے ساتھ سفر سے اجتناب کریں۔(بخاری)

5 بازار بد ترین جگہ ہے (بلا ضرورت بازار نہ جائیں) ۔(مسلم)

6 خوشبو لگا کر اور باریک لباس پہن کر گھر سے نہ نکلیں اس لئے کہ یہ عریانی اور دعوتِ گناہ ہے ۔(مسلم)

7 اپنے شوہر کی برائیاں بیان نہ کریں۔ (بخاری)

8 اپنے شوہر کی نافرمانی نہ کریں۔ (نسائی)

9 شوہر کی عدم موجودگی میں اپنی عزت، مال و اولاد کی حفاظت کری

الله پاک ہم سب کو عمل کی توفیق دے آمین
Share

Reviews and rating

Avatar
Rate this education